Connect with us

سیاست

انڈیا پاکستان کے سفارتی عملے کی تعداد کو آدھا کرنا چاہتا ہے

نئی  رپورٹ  کے  مطابق  بھارت  نے  پاکستان  کو  نئی  دہلی  میں  اپنے  سفارتی  مشن  میں  شامل  افراد  کی  تعداد  کو  آدھا  کرنے  کا  کہا  ہے  اور  یہ  الزام  بھی  لگایا  ہے  کہ  پاکستانی  سفارتکاروں  کی  سرگرمیاں  قابل  اعتراض  ہیں۔

ہندوستانی وزارت خارجہ نے ایک بیان میں کہا “وہ جاسوسی کی کارروائیوں میں ملوث ہیں اور دہشت گرد تنظیموں کے ساتھ معاملات برقرار رکھے ہوئے ہیں”۔اس کے علاوہ ہندوستان کا خیال ہے کہ “پاکستان اسلام آباد میں ہندوستانی ہائی کمیشن کے عہدیداروں کو ڈرانے کے لئے مستقل مہم میں مصروف ہے”۔

وزارت نے کہا “لہذا حکومت ہند نے نئی دہلی میں پاکستان ہائی کمیشن میں عملے کی تعداد کو 50٪ تک کم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس سے اسلام آباد میں اپنی موجودگی کو اسی تناسب سے دو طرفہ طور پر کم کیا جائے گا”۔  بیان میں مزید کہا گیا کہ بھارت اسلام آباد میں اپنے سفارت خانے میں عملہ کو اسی مناسبت سے کم کرے گا۔

جاسوسی کے الزام میں پکڑے جانے کے بعد بھارت نے 31 مئی کو دو پاکستانی سفارتکاروں کو ملک سے نکال دیا تھا  لیکن پاکستان  نے  انڈیا  کے  اس دعویٰ کو  کو “بے بنیاد” قرار  دیا ہے۔ ایٹمی مسلح حریفوں کے مابین تعلقات تناؤ کا شکار ہیں اور سفارتی عملے کو اکثر جاسوسی کے الزامات کے تحت بے دخل کردیا جاتا ہے۔دونوں  ملکوں  میں  مستقل  سفیر  موجود  نہیں  ہیں۔

Click to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

سیاست

انڈیا کے الزامات پر پاکستان کی جانب سے سخت ردعمل، وارننگ جاری

پاکستان نے نئی دہلی میں پاکستان کے ہائی کمیشن کے عملے میں 50٪ کمی لانے کے بیان اور بھارتی وزارت خارجہ کی طرف سے لگائے گئے بے بنیاد الزامات کو واضح طور پر مسترد کردیا  ہے۔ پاکستان نئی دہلی میں پاکستان کے ہائی کمیشن کے عہدیداروں کے ذریعہ ڈپلومیٹک تعلقات سے متعلق ویانا کنونشن کی کسی بھی خلاف ورزی کے الزامات کو پوری طرح مسترد کرتا ہے اور اس بات کا اعادہ کرتا ہے کہ وہ ہمیشہ بین الاقوامی قانون اور سفارتی اصولوں کے دائرہ کار میں رہتے ہیں۔

پاکستان نے اسلام آباد میں ہندوستانی ہائی کمیشن کے عہدیداروں کی دھمکیوں کی تضادات کو بھی مسترد کردیا۔ پاکستان کے خلاف ہندوستانی حکومت کی مبینہ مہم اُن غیر قانونی سرگرمیوں کو چھپا نہیں کرسکتی ہے جس میں ہندوستانی ہائی کمیشن کے عہدیدار ملوث پائے گئے تھے۔ ایم ای اے کا بیان حقائق کو مسخ کرنے اور فوجداری جرائم میں ان بھارتی ہائی کمیشن کے عہدے داروں کے مجرم ہونے کی تردید کرنے کی ایک اور کوشش ہے۔

بھارت کی پاکستانی سفارتکاروں کے  خلاف تازہ ترین کارروائی اصل میں بھارت کی مقبوضہ جموں و کشمیر  میں اس کی ریاستی دہشت گردی اور انسانی حقوق کی بدترین خلاف ورزیوں سے توجہ ہٹانے کی متعدد کوششوں کا ایک حصہ ہے۔ ہندوستان کو مشورہ دیا جائے گا کہ وہ جنوبی ایشیاء میں امن و استحکام کو  متذلذل کرنے کے بجائے اپنے اندرونی اور بیرونی معاملات پر توجہ دے۔ پاکستان عالمی برادری کو مستقل طور پر یہ  احساس  دلانے  کی  کوشش  کر  رہا  ہے کہ بی جے پی حکومت کی غیر ذمہ دارانہ پالیسیاں تیزی سے علاقائی امن و استحکام کے  لیے خطرہ  ہیں۔

اسلام آباد میں ہندوستانی سفیر کو پاکستان کی جانب سے بے بنیاد بھارتی الزامات کی تردید اور مذمت کی خاطر وزارت خارجہ میں طلب کیا گیا تھا۔ ہندوستانی سفیر کو بھی پاکستان کی جانب سے ہندوستانی ہائی کمیشن کے عملے کو 50 فیصد تک کم کرنے کے فیصلے سے آگاہ کیا گیا تھا۔ سفیر سے کہا گیا تھا کہ وہ سات دن کے اندر اس فیصلے پر عمل درآمد کرے۔

Continue Reading

سیاست

وزیر اعلی عثمان بزدار کی نااہلی کی درخواست پر لاہور ہائی کا فیصلہ

لاہور ہائیکورٹ کے رجسٹرار آفس نے 2018 کے عام انتخابات کے دوران الیکشن کمیشن آف پاکستان میں جمع کرائے گئے کاغذات نامزدگی میں اپنے اثاثوں کے بارے میں حقائق چھپانے کے لئے وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار کی نااہلی کی درخواست پر اعتراض اٹھایا ہے اور رٹ پٹیشن کو واپس کردیا ہے۔

رجسٹرار آفس نے اپنے اعتراضات میں لکھا  ہے  کہ “چونکہ بزدار نے پی پی 286 تونسہ شریف سے الیکشن جیت لیاہے، اِس  لیے  اب  یہ  معاملہ لاہور  ہائی  کورٹ ملتان بینچ کے علاقائی دائرہ اختیار میں ہے۔ درخواست گزار کو لاہور  ہائی  کورٹ ملتان بینچ سے رجوع کرنا چاہئے۔ دفتر نے اس درخواست میں چیف منسٹر کو مدعاعلیہ بنانے پر بھی اعتراض کیا ہے،  اُن  کے  مطابق وزیر اعلی کو آئینی استثنیٰ حاصل ہے۔ درخواست گزار عبدالوحید خان بلوچ نے عدالت سے استدعاء کی کہ وزیر اعلیٰ کے الیکشن کو  آئین کے آرٹیکل 62 اور 63 کی روشنی میں کالعدم قرار دیا  جائے کیونکہ وزیر اعلی ایماندار شخص نہیں ہیں۔

درخواست گزار نے مؤقف اختیار کیا کہ عثمان  بزدار  کو  بطور وزیراعلی کی رکنیت سے  معطل کیا جائے اور اُنہیں اس درخواست کے حتمی تصرف تک پنجاب کے وزیر اعلی کی حیثیت سے اپنے اختیارات کے استعمال پر پابندی عائد کی جائے گی۔ درخواست گزار کا مؤقف تھا کہ مدعی وزیراعلیٰ نے پی پی 286 ، تونسہ شریف، ڈیرہ غازیخان اا سے رکن صوبائی اسمبلی کی نشست کے لئے اپنے کاغذات نامزدگی جمع کروائے اور انہیں باقاعدہ سکیورٹی کے بعد متعلقہ افسر نے قبول کرلیا۔ بزدار نے اپنے کاغذات نامزدگی کی شکل میں فارم بی میں اثاثوں کی مجموعی مالیت 25 ملین روپے بتائی تھی لیکن ساتھ ہی انہوں نے اپنے اعلامیے اور بیان حلفی کے کالم ٹی میں اپنے اثاثوں کا ذکر 761،893 روپے بتایا۔

درخواست گزار نے مؤقف اختیار کیا کہ یہ بات واضح ہے کہ جواب دہندگان وزیر اعلی نے حقائق کو چھپایا اور اعلامیے اور بیان حلفی میں غلط تفصیلات کا تذکرہ کیا اور کاغذات نامزدگی کے ساتھ ایک جھوٹا حلف نامہ بھی پیش کیا۔ درخواست گزار نے کہا کہ ایسا کرنے سے وہ آئین کے آرٹیکل 62 اور 63 کے مطابق اب نیک اور مخلص فرد نہیں رہے۔ درخواست گزار نے عدالت سے استدعا کی کہ عثمان بزدار کے پی پی 286 سے الیکشن کو کالعدم قرار دینے کے بعد آئین کے آرٹیکل 62 اور 63 کے تحت نااہل قرار دیا جائے۔

Continue Reading

سیاست

جہانگیر ترین اور نواز شریف کی لندن میں ملاقات، حقیقت کیا ہے؟

پچھلے  چند  دنوں  سے  یہ  خبریں  سوشل  میڈیا  پر  گردش  کر  رہی  ہیں  کہ  لندن  میں  جہانگیر  ترین  اور  نواز  شریف  کی  ملاقات  ہوئی  ہے  جس  پر پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما جہانگیر خان ترین نے کہا ہے کہ وہ نہ تو پاکستان مسلم لیگ (ن) کے سربراہ نواز شریف سے ملے ہیں اور نہ ہی ان کی ایسی  کوئی خواہش ہے۔  اُن  کا  کہنا  ہے  کہ  سابق  وزیراعظم  نوازشریف  کا  میڈیا  سیل  یہ  جھوٹی  خبریں  پھیلا  رہا  ہے۔

جہانگیر ترین کے تحریک انصاف کے ساتھ تعلقات ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو رہے ہیں لیکن  پھر  بھی  اُنہوں  نے  مسلم  لیگ  (ن)  کا  حوالہ  دیتے  ہوئے کہا ہے کہ “ہماری جدوجہد ان کے خلاف رہی ہے۔ میں نے نہ تو نواز شریف سے ملاقات کی ہے اور نہ ہی میں ان سے ملنا چاہتا ہوں”۔

انہوں نے وزیر اعظم کے بارے میں کہا “میں موقع پرست سیاستدان نہیں ہوں کہ عمران  خان  کے  ساتھ  اختلافات  کی  وجہ  سے نواز شریف اور مسلم لیگ (ن) کے  ساتھ  جا  کر  مل  جاوں”۔

انہوں نے مزید کہا کہ “میں ایک اصولی سیاستدان ہوں میں نے تحریک انصاف اور  عمران  خان  کا  ساتھ  نبھانے  کی  پوری  کوشش  کی  ہے۔ اگر کوئی پریشانی ہوتی ہے تو اس میں اُن کا قصور نہیں ہے۔میں صرف الگ بیٹھا ہوں؛ جو کچھ خدا کے لئے قابل قبول ہوگا وہ ہو گا”۔

دریں اثنا اطلاعات کے مطابق مسلم لیگ (ن) کے سینئر رہنماؤں کے حوالے سے اس بات کی تصدیق کی گئی ہے کہ نواز اور ترین کے مابین کوئی ملاقات نہیں ہوئی ہے اور نہ ہی انہوں نے اس طرح کے اجلاس کے لئے جہانگیر ترین سے رجوع کیا تھا اور نہ ہی وہ ایسا کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

Continue Reading
Advertisement

تازہ ترین

پاکستان4 months ago

ایماراتی ایئرلائن نے پاکستان کے ساتھ اپنا ہوائی آپریشن معطل کردیا

متحدہ عرب امارات کی  قومی  ایئرلائن نے کرونا وائرس کی وجہ سے پاکستان کے لئے اپنا فلائٹ آپریشن معطل کردیا...

پاکستان4 months ago

کرونا سے جنگ میں چین نے پاکستان کی مکمل حمایت کا اعلان کردیا

چین نے کرونا وائرس کی وبائی بیماری سے نمٹنے کے لئے پاکستان کے تمام فورمز پر اپنی مسلسل حمایت کی...

پاکستان4 months ago

سعودیہ عرب کے نئے اعلان کے بعد وزارت حج کا عازمین حج کی ادائیگیاں واپس کرنے کے لیے اجلاس طلب

وزارت مذہبی امور کا ایک ہنگامی اجلاس  طلب کیا  گیا  ہے  جس  میں سعودی عرب کے حج 2020 سے  متعلق ...

پاکستان4 months ago

وزیراعظم عمران خان نے انتہائی دباو کے باوجود ملک میں لاک ڈاون نہ لگانے کا فیصلہ کرلیا

وزیر اعظم عمران خان نے ایک بار پھر سخت تنقید کے باوجود ملک میں مکمل لاک ڈاؤن نہ لگانے کے...

پاکستان4 months ago

پی آئی اے کا کریش سے نقصان زدہ مکانوں کی تعمیر کا اعلان

کراچی  میں  ہونے  والے  پی  آئی  اے  کے  جہاز  کے  کریش  نے  پورے  ملک  کو  اشکبار  کر  دیا۔  22 مئی ...

Advertisement