fbpx
تاریخMay 29, 2020

گداگری کا سونامی

”  ذرا  سی  بے  شرمی  ہو  تو  یہ  کاروبار  بہت  ذرخیز  ہے  ساقی  “

اسلام  ایک  مکمل  ضابطہ  حیات  ہے  جس  میں  ایک  ریاست  کی  ذمہ  داری  ہے  کہ  وہ  اپنی  عوام  کو  بنیادی  حقوق  مہیا  کرے  جیسا  کہ  حضرت  عمر  کے  دور  میں  آپ  نے  فرمایا  کہ  ایک  کتا  بھی  اگر  بھوک  پیاس  سے  مر  گیا  تو  عمر  کو  اسکی  جوابدہی  دینا  ہوگی۔  اسی  طرح  بنیادی  ضرورت  جان  و  مال  کا  تحفظ  ،  خوراک  ،  صحت  ،  اور  گزر  بسر  کیلئے  بنیادی  ضروریات  کو  پورا  کرنے  کیلئے  روزگار  کے  مواقع  فراہم  کرنا  ریاست  کی  ذمہ  داری  میں  اولین  ترجیحات  ہیں۔

پاکستان  میں  ریاست  مذکورہ  بالا  بنیادی  ضروریات  پوری  کرنے  میں  پہلے  ہی  ناکام  ہو  چکی  تھی  کہ  اب  ایک  نئے  امتحان  (کرونا) کی  صورت  میں  گداگری  کا  سونامی  آتا  ہوا  نظر  آرہا  ہے ۔  اس  ناگہانی  صورت  حال  میں  غریب  جو  بھیک  مانگنے  پر  مجبور  تھا  اور پیشہ  ور  کا  کاروبار  عرو ج  پر  تھا ، اب  غریب  مزید  مجبور  ہورہا  ہے  اور  کاروباری  کا  کاروبار  مزید  چمک  رہا  ہے۔ اس  کے  علاوہ  سفید  پوش  جو  نہ  ہاتھ  پھیلا  سکتا ہے   اور  نہ  اس  کا  ہمسایہ  اس  کا  خیال  رکھنے  کا  روادار  ہے۔  اصل  بے  بسی  تو  اس  خاموش  بھوک  کی  ہے۔

begging in Pakistan

 

 

 

 

 

 

 

پورے  ملک  میں  ہر  چوک  اور  اشاروں  پر  گداگروں  کا  تانتا  بندھا  ہوا  ہے  جن  میں  ایک  خوبصورت  تعداد  خواجہ  سراوں  کی  ہوتی  ہے۔  علاوہ  ازیں  بچوں  کی  ایک  بڑی  تعداد  جنہیں  دیکھ  کر  آپ  کے  اندر  کئی  سوالات  جنم  لیتے  ہیں۔

 

 

 

 

 

 

 

معاشرے  میں  بے  بس  مجبور  لوگ  تو  ہیں  ہی  مگر  اس  نازک  صورت  حال  میں  “بیگنگ  مافیا”  نے  بھرپور  فائدہ  اٹھاتے  ہوئے  اپنے  پنجے  اس  طرح  گاڑھ  لئے  ہیں  کہ  اپنے  فل  نیٹ  ورک  کے  ساتھ  اس  کو  ایک  کامیاب  کاروبار  کی  شکل  دیتے  ہوئے  اپنے  کارندے  بڑھاتے  جا  رہے  ہیں۔  جس  میں  چھوٹے  سے  لے  کر  اوپر  تک  ملوث  ہیں  اور  اس  کی  پوری  پوری  پشت  پناہی  کر  کے  اس  کو  پروان  چڑھایا  جا  رہا  ہے۔  حالانکہ  کچھ  حد  تک  ان  کے  خلاف  قانون  سازی  بھی  ہو  چکی  ہے  مگر  اس  پر  عمل  درآمد  ناگزیر  ہے۔  کیونکہ  ہم  لوگ  فطرتا  بہت  جلد  ڈر  جاتے  ہیں ۔  وہ  انتہا  کی  مجبور  استعداء  ایک  فقیر  کی  ہو  یا  کسی  تنتر  منتر  والے  بابا  جی  کی ،  ہم  فورا  خدمت  کے  لئے  حاضر  ہوتے  ہیں۔

 

 

 

 

 

 

 

 

حکومت  کے  ساتھ  ساتھ  معاشرے  کی  بھی  انتہائی  ذمہ  داری  ہے  کہ  وہ  ایسے  پیشہ  ور  گداگروں  کی  حوصلہ  افزائی  نہ  کرے  تا  کہ  ان  سے  اکھٹی  ہونے  والی  آمدن سے مافیا  خود  کو  پال  پوس  نہ  سکے۔  ہمیں  اپنے  گرد  و  نواح  نگاہ  رکھنی  ہوگی  کہ  ہمارے  اڑوس  پڑوس  میں  کوئی  مستحق  شخص  ہے  جس  کی  گزر  بسر  پہلے  کی  مشکل  تھی  مزید  اب  موجودہ  آفت  کی  وجہ  سے  کہیں  اس  کی  خودداری  آڑے  نہ  آرہی  ہے۔

ریاست  کو  قانون  سازی  کرتے  ہوئے  مافیا  کے  خلاف  بہتر  حکمت  عملی  اختیار  کرنی  ہوگی  اور  باقاعدہ  سابقہ  راشن  کارڈ  کے  سسٹم  کے  تحت  راشن  گداگروں کو  جاری  کیا  جائے  تو  یقینا  اس  مسئلہ  کا  حل  احسن  طریقے  سے  نکالا  جا  سکتا  ہے۔  تاکہ  اس  گداگری  کے  ناسور  کا  خاتمہ  کیا  جا  سکے  حالانکہ  اسلامی  نظام  کے  تحت  اگر  زکات  کی  ترسیل  کا  درست  انتظام  کیا  جائے  تو  یقینا  کوئی  بھیک  مانگنے  والا  نہیں  ملے  گا۔  یہ  فرد  واحد  کا  کام  نہیں  ہے  کہ  آنے  والے  معاشرے  کو  صحت  مند  اور  خوش  گوار  بنایا  جائے ۔  اگر  اس  آنے  والے  طوفان  کی  روک  تھام  نہ  کی  گئی  تو  گداگری  کی  سونامی  کو  روکنا  بہت  مشکل  ہو  جائے  گا۔

Share

Leave a Reply