fbpx
تاریخMay 26, 2020

پاکستانی قوم – اپنی دشمن آپ

Khalid Talat

پاکستانی قوم – اپنی دشمن آپ

آج  گھر  کا  کچھ  سامان  لینے  کے  لئے  مارکیٹ  جانے  کا  اتفاق  ہوا  تو  میں  یہ  دیکھ  کر  حیران  رہ  گیا  کہ  باہر  تو  ہر  طرف  رش  لگا  ہوا  ہے  ایسا  لگ  رہا  تھا  کہ  جیسے  کوئی  لاک  ڈاون  ہوا  ہی  نہ  ہو۔  میں لاہور  کی ایک  بڑی  سوپر  مارکیٹ  کی  برانچ  میں  گیا  تو  یہ  دیکھ  کر  شش  و  پنج  میں  رہ  گیا  کہ  وہاں  اتنی  بھیڑ تھی  جیسے  مفت  کا  سامان  بٹ  رہا  ہو،  بندے  سے  بندہ  ٹکرا  رہا  تھا  اور  احتیاطی  تدابیر پر  عمل  تو  ایک  طرف  بلکہ  ایسا  لگ  رہا  تھا  کہ  جیسے  لوگوں  کو  کسی  قسم  کی  کوئی  پرواہ  ہی  نہیں  ہے۔  اُس  برانچ  کے  عملے  کی احتیاطی  تدابیر  کی  صورت  یہ  تھی  کہ  ہاتھوں  میں  دستانے  تو  بہت  دور  کی  بات،  آدھے  سے  زیادہ  عملے  نے  ماسک  تک  نہیں  پہنا  ہوا  تھا۔  اور  یہی  عملہ  اپنے  کسٹمرز  کو  سامان  مہیا  کر  رہا  تھا۔  اَب  ذرا  عوام  کی  حالت  کا  جائزہ  لیتے  ہیں  جو  وہاں  شاپنگ  کرنے  آئی  ہوئی  تھی۔  اُن  میں  سے  تقریبا  آدھوں  نے  ماسک  نہیں  پہنے  ہوئے  تھے  اور  دستانے  تو  اِکا  دُکا  نے  ہی  پہننے  کی  زحمت  کی  تھی۔  حکومت  چیخ  رہی  ہے  کہ  لوگوں  کو  ایک  دوسرے  سے  فاصلہ  رکھنے  کی  ضرورت  ہے  لیکن  یہاں  تو  اتنا  رش  تھا  کہ  گزرنے  کی  جگہ  نہیں  مل  رہی  تھی ۔  اوپر  سے  ستم ظریفی  یہ  کہ  کچھ  لوگ  اپنے  ساتھ  اپنی  فیملیز  کو  بھی  لے  کر  آئے  ہوئے  تھے۔  ایک  شخص  جس  کے  ساتھ  دو  چھوٹے  بچے  تھے  اور  نہ  اُس  نے خود  ماسک  پہنا  ہوا  تھا  اور  نہ  بچوں  کو  پہنایا  ہوا  تھا۔ اُس  سے  میں  نے  پوچھا  کہ  جناب  آپ  کو  آنا  تھا  تو  آجاتے  ساتھ  بچوں  کو  لانے  کی  کیا  ضرورت  تھی؟  تو  اُس  نے  جواب  دیا  کہ  “بچے  ساتھ  جانے  کی  ضد  کر  رہے  تھے”۔  اَب  یہ  جواب  سُن  کر  میرے  اندر  جو  لاوا  پھوٹا  اور  میرا  دل  کیا  کہ  میں  اِس  بے وقوف  شخص  کے  ساتھ  وہی  حشر  کروں  جو  پولیس  والے  جیل  میں  مجرموں  کے  ساتھ  کرتے  ہیں۔

بھول  جانا  ،  غفلت  برتنا  یا  غلطی  ہو  جانا  تو  سمجھ  آتا  ہے  لیکن  خود  کو  موت  کے  منہ  میں  دھکیلنا  اِس  کو  کیا  کہا  جائے  میرے  پاس  تو  وہ  الفاظ  بھی  نہیں  ہیں۔  حکومتوں  کا  کام  آپ  کو  احتیاطی  تدابیر  بتانا  ہے  اور  عمل  کروانے  کی  کوشش  کرنا  ہے  لیکن  عمل  تو  ہم  نے  خود  کرنا  ہے۔ اَب  جب  ایسے  لوگ  اللہ  نہ  کرے  اگر  بیماری  کا  شکار  ہو  جائیں  تو  سب  سے  پہلے  گالیاں  حکومت  کو  دیں  گے  کہ  حکومت  ناکام  ہے  جبکہ  اپنے  خود  کے  کرتوت  نہیں  دیکھیں  گے۔  حکومت  نے  غریب  عوام  کا  خیال  کرتے  ہوئے  تھوڑا  سا  لاک  ڈاون  کم کیا  ہے  تو  لوگوں  نے  اپنی  اصلیت  دکھانی  شروع  کردی  ہے۔  آپ  کسی  نائی  کے  پاس  چلے  جائیں  ،  کسی  کریانے  والے  کے  پاس،  کسی  الکٹریشن  والے  کو  بُلا  لیں  آپ  کو  کہیں  کوئی  احتیاطی  تدابیر  نظر  نہیں  آئیں  گی  لیکن  یہی  سب  لوگ  حکومت  کو  بُرا  بھلا  کہنے  سے  باز  نہیں  آئیں  گے۔

حکومت  نے  عوام  سے  اپیل  کی  ہے  کہ  وہ  غیر  ضروری  کام  کے  لئے  باہر  نہ  نکلیں  اور  گھروں  میں  ٹھہرے  رہیں  لیکن مجال  ہے  جو  اِس  عوام  کی  ٹانگوں  کو  گھر  میں  سکون  ملتا  ہو۔  کل  میں  دیکھ  رہا  تھا  کچھ  لوگ  کرکٹ  کھیل  رہے  تھے  اور  اپنی  وڈیوز  بنا  کر  ڈال  رہے  تھے۔  کیا  ہے  یہ؟  کیا  اِس  قدر  جاہل  ہیں  یا  ہمیں  اِس  قدر  خود  پر  اعتماد  ہے  کہ  ہمیں  یہ  مرض  نہیں  ہوگا ؟  آخر  کیسے  اِس  عوام  کو  سمجھایا  جائے  کہ  خدارا  سمجھ  جاو  اِس  سے  پہلے  کہ  ہمارا  حال  بھی  امریکہ،  اٹلی،  انگلینڈ  اور  ایران  جیسا  ہو  جائے۔  اگر  خدا  نخواستہ  ایسا  ہوا  تو  ہمارے  پاس  تو  اتنے  وسائل  بھی  نہیں  ہیں  کہ  ہم  اتنی  بڑی  عوام  کو  بچا  پائیں۔

ہمارے  ملک  کی  اپوزیشن،  جو  کہ  ایک  عذاب  ہے  اِس  ملک  کے  لئے،  کو  چاہئے  کہ  اپنے  سیاسی  اختلافات  کو  کچھ  عرصے  کے  لئے  ایک  طرف  کرکے  زندگی  میں  ایک  دفعہ  اِس  قوم  کا  بھی  سوچ  لے۔  تمام  سیاسی  لیڈروں  کو  چاہئے  کہ  وہ  عوام  کو  سمجھائیں  کہ  جو  احتیاطی  تدابیر  حکومت  نے  جاری  کی  ہیں  اُن  پر  عمل  کرے۔

مولوی  حضرات  کو  بھی  چاہئے  کہ  ہوش  کے  ناخن  لیں  اور  لوگوں  کو  گمراہ  کرنا  بند  کریں۔  لوگوں  کو  مسجدوں  میں  آنے  سے  روکیں  تاکہ  یہ  بیماری  مزید  بڑھنے  سے  رُکے۔  مولوی  حضرات  کو  اِس  وقت  حکومت  کے  شانہ  بشانہ  کھڑا  ہونا  چاہئے  اور  حکومت  کی  مدد  کرنی  چاہئے  تاکہ  وہ  خود  بھی  بچیں  اور  عوام  کو  بھی  بچائیں۔

حکومت  کو  میرا  مشورہ  ہے  کہ  ہر  گلی  اور  سڑک  پر  ڈنڈوں  سے  لیس  پولیس  اہلکاروں  کو  کھڑا  کیا  جائے  اور  جو  بھی  حکومتی  احکامات  کی  خلاف  ورزی  کرے  اُس  کی  اچھی  خاطرداری  کرے  کیونکہ  یہ  قوم  اِسی  لائق  ہے۔  کیونکہ  ہم  ہر  چیز  سے  لڑ  سکتے  ہیں  لیکن  جہالت  سے  نہیں  جو  کہ  ہم  میں  کوٹ  کوٹ  کر  بھری  ہوئی  ہے۔

Leave a Reply