fbpx
تاریخMay 26, 2020

نفسا نفسی

نفسا  نفسی

ایک  موقع پر  قاسم  علی  شاہ  نے  بتایا  کہ  ایک  وقت  تھا  میں  اپنے  کاروبار  سے  شدید  پریشان  تھا۔  ملازمین  کو  تنخواہ  دینے  کے  لئے  بھی  پیسے  نہیں  تھے۔  میں  پریشانی  کی  حالت  میں  اپنے  استاد  ،  گرو  سرفراز  علی  شاہ  کے  پاس  چلا  گیا  اور  باتوں  باتوں  میں  بتایا  کہ  میں  حالات  سے  بہت  تنگ  ہوگیا  ہوں  تنخواہیں  دینے  کے  لئے  بھی  پیسے  نہیں  ہیں ۔  انہوں  نے  پوچھا  کہ  آپ  کے  ذاتی  ملازم  کتنے  ہیں  میں  نے  عرض  کیا  دو  ہیں  انہوں  نے  فرمایا  دو  اور  رکھ  لو  بہتر  ہو  جائے  گا ۔  میں  حیران  تھا  مگر  میں  نے  ایسا  ہی  کیا  تو  آہستہ  آہستہ  میری  تنگی  دور  ہوتی  گئی  اور  میں  اِس  مشکل  سے  نکل  آیا۔  بعد  میں  موقع  ملا  میں  نے  شاہ  صاحب  سے  عرض  کیا  جناب  اس  میں  کیا  حکمت  پوشیدہ  تھی۔  آپ  نے  فرمایا  اُن  دونوں  کی  وجہ  سے  تم  سب  کو  رزق  ملنا  شروع  ہو  گیا  ہے ۔  اسی  طرح  موجودہ  حالات  کی  روشنی  میں  جو  صورت  حال  اِس  وقت  ہو  گئی  ہے یہ  ایسی  ہی  نظر  آرہی  ہے خدا  نہ  کرے  ایسے  حالات  ہو  جائیں  کہ  نفسا  نفسی  کا  عالم  بن  جائے۔

ہم  سنتے  ہیں  کہ  روز  قیامت  اسی  طرح  نفسا  نفسی  کا  عالم  ہوگا  ماں  اپنے  بچوں  کی  اور  کوئی  رشتہ  دوسرے  قریب  ترین  رشتہ  کی  پروا ہ  نہیں  کرے  گا ۔  آپ  ابھی  اس  کرونا  کی  ایک  نشانی  دیکھ  لیں  اور  آزمالیں  آپ  اپنے  گھر  میں  خدانخواستہ  ظاہر  کریں  کہ  آپکو  کرونا  ہوا  ہے۔  آپکے  والدین،  بیوی  بچے  بھائی  بہن  آپ  سے  کس  طرح  دور  بھاگیں  گے۔  جن  بیوی  بچوں  کو  خوش  رکھنے  کے  لئے  آپ  حلال  حرام  کی  تمیز  بھول  بیٹھے  ہیں  آج  وہی  بیوی  بچے  آپ سے  ملنے  کو  بھی  راضی  نہیں  ہوں  گے  اور  آپ  کو  ہسپتال  کا  راستہ  دکھا  دیں  گے۔  یہاں  تک  کہ  خود  پولیس  کو  کال  کرکے  آپ  کی  اطلاع دیں  گے۔  اور  آپ  کے  ماں  باپ  بھی  آپ  کو  گھر  نہ  آنے  کا  مشورہ  دیں  گے  چاہے  وہ  آپ  سے  کتنا  کی  پیار  کیوں  نہ  کرتے  ہوں۔

جو  لوگ  اس  موزی  مرض  سے  زندگی  کی  بازی  ہارے  ہیں  ان  کے  رشتہ  دار  تک  ان  کا  جنازہ  پڑھنے  نہیں  آسکے  نہ  آخری  دفعہ صورت  دیکھنا  نصیب  ہوا۔

قیامت  کے  دن  انسان  کو  یہی  پچھتاوا  ہوگا  کہ  اس  نے  اپنا  سب  کچھ  خدا  کے  واسطے  غریبوں  میں  کیوں  نہ  لگایا  اور  غریبوں  کی  مدد  کیوں  نہیں  کی۔  اِس  نفسا  نفسی  کے  عالم  میں  سبق  سیکھتے  ہوئے  وقت  ضائع  کئے  بغیر  مستحق  لوگوں  کی  مدد  کرنے  میں  اپنا  حصہ  ڈالیں۔  اپنے  مال  سے  خرچ  کرکے  لوگوں  کیلئے  آسانیاں  پیدا  کرنے  کی  کوشش  کریں۔  حضور  پاک ص  نے  فرمایا  “اگر  کوئی  میرا  دروازی  دستک  کرے  کسی  کام  کیلئے  اور  میں  ‘محمد’ اُس  کی  مدد  کے  لئے  نکل  جاوں  تو  یہ  میرے  ایک  ماہ  مسجد  می  بیٹھ  کر  اعتکاف  کی  قبول  عبادت  سے  زیادہ  افضل  ہے”۔

اللہ  ہم  سب  کے  لئے  دنیا  اور  آخرت  میں  آسانیاں  پیدا  کرے  آمین۔

Share

Leave a Reply