fbpx
Connect with us

Pro Urdu

حسن نثار نے مولانا طارق جمیل سے معافی کیوں مانگی؟

Published

on

حسن  نثار  نے  اپنے  ایک  وڈیو  پیغام  میں  مولانا  طارق  جمیل  سے  معافی  مانگی  ہے  لیکن  یہ  انہوں  نے  اپنی  کسی  غلطی  کی  وجہ  سے  نہیں  مانگی  بلکہ  مولانا  طارق  جمیل  پر  میڈیا  کے  کچھ  لوگوں  کی  طرف  سے  لگاتار  لفظی  حملوں  کی  وجہ  مانگی  ہے۔

انہوں  نے  اپنے  پیغام  میں  کہا  ہے  کہ  جو  بھی  مولانا  صاحب  نے  کہا  ہے  وہ  ایک  حد  تک  درست  ہے  اور  ہم  سب  ہی  جھوٹ  اور  دھوکہ  بازی  میں  بہت  بڑھ  چکے  ہیں۔  انہوں  نے  مزید  کہا  ہے  کہ  مولانا  ایک  محبت  کرنے  والے  دیندار  شخصیت  ہیں  اور  وہ  بنا  کسی  لالچ  کے  لوگوں  کو  اللہ  کے  راستہ  کی  طرف  بلاتے  ہیں  اور  اگر  اُن   کے  منہ  سے  ایسے  کچھ  کلمات  نکل  بھی  گئے  ہیں  تو  اِس  بات  کو  اتنا  بڑھانا  نہیں  چاہئے  تھا۔

مزید  دیکھئے  اِس  وڈیو  میں  کہ  حسن  نثار  نے  کیا  کہا۔

Click to comment

Leave a Reply

Pro Urdu

پاکستانی قوم – اپنی دشمن آپ

Published

on

پاکستانی قوم – اپنی دشمن آپ

آج  گھر  کا  کچھ  سامان  لینے  کے  لئے  مارکیٹ  جانے  کا  اتفاق  ہوا  تو  میں  یہ  دیکھ  کر  حیران  رہ  گیا  کہ  باہر  تو  ہر  طرف  رش  لگا  ہوا  ہے  ایسا  لگ  رہا  تھا  کہ  جیسے  کوئی  لاک  ڈاون  ہوا  ہی  نہ  ہو۔  میں لاہور  کی ایک  بڑی  سوپر  مارکیٹ  کی  برانچ  میں  گیا  تو  یہ  دیکھ  کر  شش  و  پنج  میں  رہ  گیا  کہ  وہاں  اتنی  بھیڑ تھی  جیسے  مفت  کا  سامان  بٹ  رہا  ہو،  بندے  سے  بندہ  ٹکرا  رہا  تھا  اور  احتیاطی  تدابیر پر  عمل  تو  ایک  طرف  بلکہ  ایسا  لگ  رہا  تھا  کہ  جیسے  لوگوں  کو  کسی  قسم  کی  کوئی  پرواہ  ہی  نہیں  ہے۔  اُس  برانچ  کے  عملے  کی احتیاطی  تدابیر  کی  صورت  یہ  تھی  کہ  ہاتھوں  میں  دستانے  تو  بہت  دور  کی  بات،  آدھے  سے  زیادہ  عملے  نے  ماسک  تک  نہیں  پہنا  ہوا  تھا۔  اور  یہی  عملہ  اپنے  کسٹمرز  کو  سامان  مہیا  کر  رہا  تھا۔  اَب  ذرا  عوام  کی  حالت  کا  جائزہ  لیتے  ہیں  جو  وہاں  شاپنگ  کرنے  آئی  ہوئی  تھی۔  اُن  میں  سے  تقریبا  آدھوں  نے  ماسک  نہیں  پہنے  ہوئے  تھے  اور  دستانے  تو  اِکا  دُکا  نے  ہی  پہننے  کی  زحمت  کی  تھی۔  حکومت  چیخ  رہی  ہے  کہ  لوگوں  کو  ایک  دوسرے  سے  فاصلہ  رکھنے  کی  ضرورت  ہے  لیکن  یہاں  تو  اتنا  رش  تھا  کہ  گزرنے  کی  جگہ  نہیں  مل  رہی  تھی ۔  اوپر  سے  ستم ظریفی  یہ  کہ  کچھ  لوگ  اپنے  ساتھ  اپنی  فیملیز  کو  بھی  لے  کر  آئے  ہوئے  تھے۔  ایک  شخص  جس  کے  ساتھ  دو  چھوٹے  بچے  تھے  اور  نہ  اُس  نے خود  ماسک  پہنا  ہوا  تھا  اور  نہ  بچوں  کو  پہنایا  ہوا  تھا۔ اُس  سے  میں  نے  پوچھا  کہ  جناب  آپ  کو  آنا  تھا  تو  آجاتے  ساتھ  بچوں  کو  لانے  کی  کیا  ضرورت  تھی؟  تو  اُس  نے  جواب  دیا  کہ  “بچے  ساتھ  جانے  کی  ضد  کر  رہے  تھے”۔  اَب  یہ  جواب  سُن  کر  میرے  اندر  جو  لاوا  پھوٹا  اور  میرا  دل  کیا  کہ  میں  اِس  بے وقوف  شخص  کے  ساتھ  وہی  حشر  کروں  جو  پولیس  والے  جیل  میں  مجرموں  کے  ساتھ  کرتے  ہیں۔

بھول  جانا  ،  غفلت  برتنا  یا  غلطی  ہو  جانا  تو  سمجھ  آتا  ہے  لیکن  خود  کو  موت  کے  منہ  میں  دھکیلنا  اِس  کو  کیا  کہا  جائے  میرے  پاس  تو  وہ  الفاظ  بھی  نہیں  ہیں۔  حکومتوں  کا  کام  آپ  کو  احتیاطی  تدابیر  بتانا  ہے  اور  عمل  کروانے  کی  کوشش  کرنا  ہے  لیکن  عمل  تو  ہم  نے  خود  کرنا  ہے۔ اَب  جب  ایسے  لوگ  اللہ  نہ  کرے  اگر  بیماری  کا  شکار  ہو  جائیں  تو  سب  سے  پہلے  گالیاں  حکومت  کو  دیں  گے  کہ  حکومت  ناکام  ہے  جبکہ  اپنے  خود  کے  کرتوت  نہیں  دیکھیں  گے۔  حکومت  نے  غریب  عوام  کا  خیال  کرتے  ہوئے  تھوڑا  سا  لاک  ڈاون  کم کیا  ہے  تو  لوگوں  نے  اپنی  اصلیت  دکھانی  شروع  کردی  ہے۔  آپ  کسی  نائی  کے  پاس  چلے  جائیں  ،  کسی  کریانے  والے  کے  پاس،  کسی  الکٹریشن  والے  کو  بُلا  لیں  آپ  کو  کہیں  کوئی  احتیاطی  تدابیر  نظر  نہیں  آئیں  گی  لیکن  یہی  سب  لوگ  حکومت  کو  بُرا  بھلا  کہنے  سے  باز  نہیں  آئیں  گے۔

حکومت  نے  عوام  سے  اپیل  کی  ہے  کہ  وہ  غیر  ضروری  کام  کے  لئے  باہر  نہ  نکلیں  اور  گھروں  میں  ٹھہرے  رہیں  لیکن مجال  ہے  جو  اِس  عوام  کی  ٹانگوں  کو  گھر  میں  سکون  ملتا  ہو۔  کل  میں  دیکھ  رہا  تھا  کچھ  لوگ  کرکٹ  کھیل  رہے  تھے  اور  اپنی  وڈیوز  بنا  کر  ڈال  رہے  تھے۔  کیا  ہے  یہ؟  کیا  اِس  قدر  جاہل  ہیں  یا  ہمیں  اِس  قدر  خود  پر  اعتماد  ہے  کہ  ہمیں  یہ  مرض  نہیں  ہوگا ؟  آخر  کیسے  اِس  عوام  کو  سمجھایا  جائے  کہ  خدارا  سمجھ  جاو  اِس  سے  پہلے  کہ  ہمارا  حال  بھی  امریکہ،  اٹلی،  انگلینڈ  اور  ایران  جیسا  ہو  جائے۔  اگر  خدا  نخواستہ  ایسا  ہوا  تو  ہمارے  پاس  تو  اتنے  وسائل  بھی  نہیں  ہیں  کہ  ہم  اتنی  بڑی  عوام  کو  بچا  پائیں۔

ہمارے  ملک  کی  اپوزیشن،  جو  کہ  ایک  عذاب  ہے  اِس  ملک  کے  لئے،  کو  چاہئے  کہ  اپنے  سیاسی  اختلافات  کو  کچھ  عرصے  کے  لئے  ایک  طرف  کرکے  زندگی  میں  ایک  دفعہ  اِس  قوم  کا  بھی  سوچ  لے۔  تمام  سیاسی  لیڈروں  کو  چاہئے  کہ  وہ  عوام  کو  سمجھائیں  کہ  جو  احتیاطی  تدابیر  حکومت  نے  جاری  کی  ہیں  اُن  پر  عمل  کرے۔

مولوی  حضرات  کو  بھی  چاہئے  کہ  ہوش  کے  ناخن  لیں  اور  لوگوں  کو  گمراہ  کرنا  بند  کریں۔  لوگوں  کو  مسجدوں  میں  آنے  سے  روکیں  تاکہ  یہ  بیماری  مزید  بڑھنے  سے  رُکے۔  مولوی  حضرات  کو  اِس  وقت  حکومت  کے  شانہ  بشانہ  کھڑا  ہونا  چاہئے  اور  حکومت  کی  مدد  کرنی  چاہئے  تاکہ  وہ  خود  بھی  بچیں  اور  عوام  کو  بھی  بچائیں۔

حکومت  کو  میرا  مشورہ  ہے  کہ  ہر  گلی  اور  سڑک  پر  ڈنڈوں  سے  لیس  پولیس  اہلکاروں  کو  کھڑا  کیا  جائے  اور  جو  بھی  حکومتی  احکامات  کی  خلاف  ورزی  کرے  اُس  کی  اچھی  خاطرداری  کرے  کیونکہ  یہ  قوم  اِسی  لائق  ہے۔  کیونکہ  ہم  ہر  چیز  سے  لڑ  سکتے  ہیں  لیکن  جہالت  سے  نہیں  جو  کہ  ہم  میں  کوٹ  کوٹ  کر  بھری  ہوئی  ہے۔

Continue Reading

Pro Urdu

نفسا نفسی

Published

on

نفسا  نفسی

ایک  موقع پر  قاسم  علی  شاہ  نے  بتایا  کہ  ایک  وقت  تھا  میں  اپنے  کاروبار  سے  شدید  پریشان  تھا۔  ملازمین  کو  تنخواہ  دینے  کے  لئے  بھی  پیسے  نہیں  تھے۔  میں  پریشانی  کی  حالت  میں  اپنے  استاد  ،  گرو  سرفراز  علی  شاہ  کے  پاس  چلا  گیا  اور  باتوں  باتوں  میں  بتایا  کہ  میں  حالات  سے  بہت  تنگ  ہوگیا  ہوں  تنخواہیں  دینے  کے  لئے  بھی  پیسے  نہیں  ہیں ۔  انہوں  نے  پوچھا  کہ  آپ  کے  ذاتی  ملازم  کتنے  ہیں  میں  نے  عرض  کیا  دو  ہیں  انہوں  نے  فرمایا  دو  اور  رکھ  لو  بہتر  ہو  جائے  گا ۔  میں  حیران  تھا  مگر  میں  نے  ایسا  ہی  کیا  تو  آہستہ  آہستہ  میری  تنگی  دور  ہوتی  گئی  اور  میں  اِس  مشکل  سے  نکل  آیا۔  بعد  میں  موقع  ملا  میں  نے  شاہ  صاحب  سے  عرض  کیا  جناب  اس  میں  کیا  حکمت  پوشیدہ  تھی۔  آپ  نے  فرمایا  اُن  دونوں  کی  وجہ  سے  تم  سب  کو  رزق  ملنا  شروع  ہو  گیا  ہے ۔  اسی  طرح  موجودہ  حالات  کی  روشنی  میں  جو  صورت  حال  اِس  وقت  ہو  گئی  ہے یہ  ایسی  ہی  نظر  آرہی  ہے خدا  نہ  کرے  ایسے  حالات  ہو  جائیں  کہ  نفسا  نفسی  کا  عالم  بن  جائے۔

ہم  سنتے  ہیں  کہ  روز  قیامت  اسی  طرح  نفسا  نفسی  کا  عالم  ہوگا  ماں  اپنے  بچوں  کی  اور  کوئی  رشتہ  دوسرے  قریب  ترین  رشتہ  کی  پروا ہ  نہیں  کرے  گا ۔  آپ  ابھی  اس  کرونا  کی  ایک  نشانی  دیکھ  لیں  اور  آزمالیں  آپ  اپنے  گھر  میں  خدانخواستہ  ظاہر  کریں  کہ  آپکو  کرونا  ہوا  ہے۔  آپکے  والدین،  بیوی  بچے  بھائی  بہن  آپ  سے  کس  طرح  دور  بھاگیں  گے۔  جن  بیوی  بچوں  کو  خوش  رکھنے  کے  لئے  آپ  حلال  حرام  کی  تمیز  بھول  بیٹھے  ہیں  آج  وہی  بیوی  بچے  آپ سے  ملنے  کو  بھی  راضی  نہیں  ہوں  گے  اور  آپ  کو  ہسپتال  کا  راستہ  دکھا  دیں  گے۔  یہاں  تک  کہ  خود  پولیس  کو  کال  کرکے  آپ  کی  اطلاع دیں  گے۔  اور  آپ  کے  ماں  باپ  بھی  آپ  کو  گھر  نہ  آنے  کا  مشورہ  دیں  گے  چاہے  وہ  آپ  سے  کتنا  کی  پیار  کیوں  نہ  کرتے  ہوں۔

جو  لوگ  اس  موزی  مرض  سے  زندگی  کی  بازی  ہارے  ہیں  ان  کے  رشتہ  دار  تک  ان  کا  جنازہ  پڑھنے  نہیں  آسکے  نہ  آخری  دفعہ صورت  دیکھنا  نصیب  ہوا۔

قیامت  کے  دن  انسان  کو  یہی  پچھتاوا  ہوگا  کہ  اس  نے  اپنا  سب  کچھ  خدا  کے  واسطے  غریبوں  میں  کیوں  نہ  لگایا  اور  غریبوں  کی  مدد  کیوں  نہیں  کی۔  اِس  نفسا  نفسی  کے  عالم  میں  سبق  سیکھتے  ہوئے  وقت  ضائع  کئے  بغیر  مستحق  لوگوں  کی  مدد  کرنے  میں  اپنا  حصہ  ڈالیں۔  اپنے  مال  سے  خرچ  کرکے  لوگوں  کیلئے  آسانیاں  پیدا  کرنے  کی  کوشش  کریں۔  حضور  پاک ص  نے  فرمایا  “اگر  کوئی  میرا  دروازی  دستک  کرے  کسی  کام  کیلئے  اور  میں  ‘محمد’ اُس  کی  مدد  کے  لئے  نکل  جاوں  تو  یہ  میرے  ایک  ماہ  مسجد  می  بیٹھ  کر  اعتکاف  کی  قبول  عبادت  سے  زیادہ  افضل  ہے”۔

اللہ  ہم  سب  کے  لئے  دنیا  اور  آخرت  میں  آسانیاں  پیدا  کرے  آمین۔

Continue Reading

Pro Urdu

مردِ مومن (ڈاکٹر اسرار احمد رح)۔

Published

on

Dr. Israr Ahmed

Dr. Israr Ahmed

مردِ  مومن

 چودہ  اپریل یوم  وفات اُس  مرد  مومن  کا  جو  ایسا  شاہین  اور  وہ  مجاہد  ہے  جس  کا  ذکر  ہمیں  ڈاکٹر  علامہ  اقبال  کی  شاعری  سے  ملتا  ہے۔  وہ  طالب  علم  جس  نے  اپنی  پوری  زندگی  دینِ  اسلام  کیلئے  اور  لوگوں  کو  قرآن  کی  تعلیم  و  تشریح  سکھانے  کیلئے  اپنی  دنیاوی  زندگی  اور  اپنا  پروفیشن  چھوڑ  کر  اللہ  اور  اسکے  رسول  کیلئے  اور  اللہ  کے  دین  کی  بالادستی  کیلئے  خود  کو  وقف  کردیا  تھا۔  ایسا  انسان  جس  نے  اپنی  تمام  عمر  تبلیغِ  اسلام  اور  قرآن  سکھانے  کیلئے  لگادی  تھی۔  اور  اپنی  وفات  کے  بعد  میں  رہتی  دنیا  تک  اپنی  تعلیمات  کا  خزانہ  مختلف  انداز  میں  ہمارے  لئے  اور  آنے  والے  لوگوں  کو  پہنچتا  رھے  گا  جسکا  اجر  و  ثواب  اِس  فرد  مومن  کے  نامہ  اعمال  میں  جمع  ہوتا  رہے  گا ۔

مگر  سد  افسوس  کے  ساتھ  کہنا  پڑرھا  ہے  کہ  اِس  مردِ  مجاہد  کو  جس  قدر  و  عزت  اور  مان  ملنا  چاہئے  تھا  ہم  وہ  ادا  نہ  کر  سکے  جسکے  وہ  حقدار  تھے۔  مگر  اِس  بات  کا  یقین  کامل  ہے  کہ  خدا  کی  ذات  جو  ہر  دل  و  فعل  اور  نیتوں  کا  جاننے  والا  ہے  اِس  کا  اجر  و  ثواب  بہتر  دیگا۔

Continue Reading
Advertisement

Also Read